813

صوبائی حکومت نے کنٹرولر سوات بورڈ کیلئے گریڈ سترہ کے افیسر کو تعینات کرکے میرٹ کی دھچیاں اڑادیں.

بریکوٹ(ظاہر شاہ کمال )صوبائی حکومت نے کنٹرولر سوات بورڈ کیلئے گریڈ سترہ کے افیسر کو تعینات کرکے میرٹ کی دھچیاں اڑ ادیں،پہلے سے ہی گریڈ سترہ پر تعینات سکرٹری سوات بورڈعمر حسین اب کنٹرولر کی پوسٹ پر گریڈ اٹھارہ پر ذمہ داریاں سنبھالیں گے،وزیراعلیٰ نے سمر ی پر دستخط کردیئے ،تفصیلات کے مطابق سوات تعلیمی بورڈ میں کنٹرولر کے عہدے پر سیاست غالب اگئی ، گریڈ اٹھارہ کے عہدے پر گریڈ سترہ کے افسرکی تعیناتی عمل میںلائی گئی ہے، اس سے پہلے ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ گریڈ اٹھارہ کے افیسرز کا انٹرویو لیکر کسی ایک کو کنٹرولر اف بورڈبناتے ، تاہم اس مرتبہ سوات تعلیمی بورڈ کیلئے سیکرٹری بورڈ عمر حسین کو ترقی دیئے بغیر اٹھارہ گریڈ کا عہدہ دیا گیاہے جو قانون کے سراسر خلاف ہیں،کنٹرولر سوات بورڈ کے عہدے کیلئے تیرہ افراد نے انٹرویو دیئے تھے جن میں سے کسی ایک کوبھی کنٹرولر کا عہدہ نہیں دیا گیا، جبکہ جس شخص کی تعیناتی عمل میں لائی گئی ہے اس سے انٹرویو بھی نہیں لی گئی،بورڈ عہدیدار کو کنٹرولر بنانے کیخلاف سپریم کورٹ اف پاکستان نے بھی 18 مارچ 2018 کو اپنا فیصلہ سنا دیاہے، جس کے مطابق تین سالہ مدت کیلئے یہ عہدہ ڈیپوٹیشن پرانے والے گریڈ اٹھارہ کے افسر کو دیا جائیگا، تاہم صوبائی حکومت نے قواعد وضوابط سے ہٹ کر ایسے شخص کو کنٹرولر کا عہدہ دیا ہے جو اس سے پہلے کسی حکومت نے نہیں دیااور نہ ہی اس سے قبل یہ روایت کہیں موجود ہے۔ صوبائی حکومت کے اس فیصلہ پر پرائیویٹ ایجوکیشن نیٹ ورک سمیت دیگر اساتزہ، پروفیسرز کی تنظیموں کو تحفظا ت ہیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں