947

عالمی یوم مادری زبان سوات میں جو ش و جذبے سے منایا گیا

عالمی یوم مادری زبان سوات میں جو ش و جذبے سے منایا گیا ، تقریب میں شعراء، ادیب اور مختلف مکتبہ فکر کے لوگوں نے شرکت کی ، شعراءکرام نے پشتو زبان میں زبان کی اہمیت کے حوالے سے نظمیں پیش کیئں ، سوچہ لیکوال سوات اور لیٹریٹ ماسیز کے تعاون سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے تحصیل ناظم اکرام خان ، ابراہیم شبنم ، حنیف قیص ، عثمان اولس یار ، عطاءاللہ جان ، روح الامین نایاب ، ڈاکٹر عبدالحق یوسفزئی ، پروفیسر عطاءاللہ عطاء، فضل محمود روخان اور دیگر نے کہا کہ زبان بھولنے والے اقوام اپنی حیثیت اور شخصیت کھو جاتے ہیںاور دنیا سے ان کا نام مٹ جاتا ہے ، انہوں نے کہا کہ پشتوزبان ہزاروں سال پرانی زبان ہے اور دنیا کے ہزاروں زبان میں یہ 54نمبر پر ہے اس سے اندازہ لگایا جاتا ہے کہ یہ کتنی اہم زبان ہے ، انہوںنے کہا کہ زبان کے مزید فروغ کیلئے ہر مکتہ فکر اور ہر شعبہ سے تعلق رکھنے والے کردار ادا کریں ، یہ درست ہے کہ شعراءقوم کی آنکھیں ہیں لیکن قوم میں سکالر ز بھی ہیں ان کو چاہیئے کہ وہ اپنے شعبے میں پشتو زبان پر تحقیق کریں تاکہ نسل نو مستفید ہوں ، انہوں نے ذمہ داروں سے بھی مطالبہ کیا کہ پشتوزبان کو تعلیمی زبان میں لازمی قرار دیا جائے اور سوات یونیورسٹی میں پشتو ڈیپارٹمنٹ شروع کیا جائے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں