988

وقت کا تقاضہ ہے کہ ملاکنڈ ڈویژن کو الگ صوبے کا درجہ دیا جائے.چئیرمین اصف علی شاہ باچا

پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنماءو مشترکہ ناظم اتحاد کونسل کے چئیرمین اصف علی شاہ باچا نے کہاہے کہ وقت کا تقاضہ ہے کہ ملاکنڈ ڈویژن کو الگ صوبے کا درجہ دیا جائے ،ابادی میں تیزی کے ساتھ اضافے کیوجہ سے مسائل بڑھ رہے ہیں اگر چھوٹے چھوٹے یونٹس نہ بنائے گئے تو مسائل بے قابوہوتے جائیںگے ،دنیا کے دیگر ممالک میں چھوٹے یونٹس کی بدولت عوام کو بہترین سہولیات میسر ہیں ہم بھی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ ملکی ترقی اور عوام کے فلاح وبہبود کیلئے اقدامات اٹھائیںان خیالا کا اظہار انہوںنے گزشتہ روز اخباری نمائندوں کو انٹرویودیتے ہوئے کیا انہوںنے کہاکہ ملاکنڈ ڈویژن جوکہ قدرتی وسائل سے مالامال ہے یہاں پر معدنیات کے وسیع ذخائر ہے ،خوبصور ت سیاحتی مقامات اور جنگلات ونباتات علاقے کو ملک کے دیگر علاقوں سے امتیاز بخشتی ہے دوسری بات یہ کہ اج کے دور میں جیسا کہ ہم سب کو معلوم ہے کہ ابادی بہت تیزی سے بڑھ رہی ہے اگر پچھلے چالیس یا پچاس سالوں کا موازنہ اج کے دور سے کیا جائے تو اس وقت کے پورے صوبے کی ابادی اج کے ملاکنڈ ڈویژن کی ابادی سے کم ہوگی انہوںنے کہاکہ اگر حکومت ملاکنڈ ڈویژن کو صوبے کا درجہ دیتی ہے تو یہاں پر وزیر اعلی اور صوبائی وزراءہروقت دستیاب ہونگے جو اپنے صوبے کے مسائل بااسانی حل کرسکیںگے اب تو یہ حال ہے کہ جو بھی وزیراعلی بنتا ہے تو اس بچارے کو پشاور کے مسائل سے فرصت نہیں ملتی تو دیگر علاقوں کے انتظامات کیلئے کیا کریںگے ہمارے وزراءاور صوبائی حکومت پر وسیع علاقوں کے مسائل کا بوجھ ڈال دیا جاتا ہے جس کی وجہ سے عوامی مشکلات کم ہونے کے بجائے مزید بڑھ جاتے ہیں لہذا ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ ملاکنڈ کو صوبے کا درجہ دیتے ہوئے عوامی مشکلات کے خاتمے میں اپنا کردار ادا کریں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں